Powered by UITechs
Get password? Username Password
 
 
Page 1 of 1

  Reply to Topic    Printer Friendly 

AuthorTopic
kaukab
Moderator

PAKISTAN
Topic initiated on Thursday, January 26, 2006  -  7:51 AM Reply with quote
اجتماعی عبادت میں طوالت سے گریز


ہم بالعموم دیکھتے ہیں کہ اجتماعی عبادتوں میں غیر ضروری طالت اختیار کرکے اسے باعث اجر سمجھا جاتا ہے-امام صاحب نمازوں میں قراءت بہت لمبی کراتے ہیں یا دینی مجالس میں دعا کا موقع آۓ تو بہت لمبی لمبی دعا کروائ جاتی ہے کہ لوگ بیزار ہونا شروع ہو جاتے ہیں-اسلام دین فطرت بھی ہے اور پرحکمت دین بھی-آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی ایک حدیث ہے کہ اے لوگو؛ تم دین سے متنفر کرنے والےہو-جو لوگوں کی امامت کرواۓ اسے ہلکی نماز پڑھانی چاہیے اس لیے کہ مقتدیوں میں بیمار ،بوڑھے اور کام کاج کو جانے والے بھی ہوتے ہیں-
askhalifa

UNITED ARAB EMIRATES
Posted - Thursday, January 26, 2006  -  12:15 PM Reply with quote
کم از کم نمازوں کے بارے میں مجھے نہیں لگتا کہ اس میں غیر ضروری طوالت اختیار کی جانی ہے، اگر ہے تو بھی یہ بالعموم نہیں بلکہ کبھی کبھار یا کچھ امام صاحبان ممکن ہے کہ ایسا کرتے ہوں۔
آج کے دور میں بے چارے مولوی صاحبان سب سے مظلوم بن گئے ہیں۔ ان کو آپ کچھ بھی بولیں جو چاہے الزام لگائیں سب آپ کی ہاں میں ہاں ملائینگے۔ اس معاملے ماشاءاللہ ہم سے کوئی پوچھ غالباً نہیں ہوگی۔ کہیں پر کچھ بھی ہو جائے یہ جاہل مولوی ذمہ دار ہیں۔ مسلمان تعلیم یافتہ نہیں ہیں، مسلمانوں میں کو ئی بڑا سائنسدان نہیں ہے، مسلمان سیاسی طور پر کمزور ہیں، عورتوں کا ریپ ہوتا ہے کچھ بھی ہو جائے ، ہر چیز کے لئے مولوی ذمہ دار ہے۔
kaukab
Moderator

PAKISTAN
Posted - Monday, January 30, 2006  -  8:09 AM Reply with quote
بہن میں نے اپنی تحریر میں مولوی کا نہ تو "لفظ" استمال کیا ہے اور نہ ہی کسی چیز میں انھیں مورد الزام ٹھہرایا ہے -حضورصلی اللہ علیہ وسلم نے اجتماعی تربیت کے لیے جو بات کہی وہ آپ تک پہنچا دی-وعظ وتلقین تو ہر تھوڑا بہت علم رکھنے والا اپنی ذمہ داری سمجھتا ہے ،میں بھی اسی کیٹیگری میں ہوں اور ہر وہ مرد وعورت جو لوگوں کی ہدایت کے درس وتدریس کا اہتمام کرتے ہیں-اس کے باوجود اگر میری کسی بات سے تکلیف پہنچی ہو تو معذرت چاہتی ہوں-
raushan

UNITED ARAB EMIRATES
Posted - Tuesday, January 31, 2006  -  11:59 AM Reply with quote
Maulvi sahban ki bahot badi contribution hai qaum ko is hawale se ke unhone qaum ko deen ka utna hissa jitna unhone samjha ya padha ,pahunchaa diya aur pahuncha rahe hain..kami sirf unke fikri jamood mein hai.ke koi bhi baat jo unhein maloom nahin ya nayi lage uska inkar kar diya ya ghair islami qarar de diya..
misal ke taur pe ahkam ke muqable ghaur o fikr ke taraf tahreek dene wali aaytein kayi guna ziyada hain .lekin aap dekheinge ke unki libraries to ahkam ke mutallique likhi kitabon se bhari huyi hain magar ghaur o fikr ko unhone amlan band kar rakha hai.warna science ke sabse achhe students madarse mein he paida hote ..
haal ke imrana mamle mein unhone yeh tahqeeq kiye baghair fatwa de diya ke aaya woh rape hua bhi tha ke nahin ya ke asal masla kya tha..na ye janne ki koshish ki ke fatwa lena wala kaun hai aur wo iska kya fayeda uthayega..ab aise log deen ke bare mein raye dene lagein to Allah he hafiz hai

Edited by: raushan on Monday, February 27, 2006 10:52 AM
askhalifa

UNITED ARAB EMIRATES
Posted - Tuesday, January 31, 2006  -  1:21 PM Reply with quote
محترمہ کوکب صاحبہ؛
خواتین کے فورم میں مداخلت کے لئے معافی چاہتا ہوں، اصل میں میں ،میں اس موضوع پر ہوم پیج کے ذریعے سے پہونچا ہوں۔ جب آپ نے مجھے بہن قرار دے دیا تب مجھے پتہ چلا کہ میں غلط جگہ آیا ہوں۔ یا پھر مجھے کم سے کم اپنا تعارف ہی کرا دینا چاہئے تھا۔ بہر حال میرا مقصد یہاں پر مولویوں کا دفاع کرنا نہیں ہے۔ ان کی اپنی خامیاں اپنی جگہ پر ہے جیسے کہ بہن روشن نے بیان کیا۔
یہ مسئلہ مولویوں سے متعلق اس لئے ہے کہ عمومی طور پر اجتماعی عبادات مولویوں کے تحت ہی ہوتی۔ جس طرح مولوی حضرات کے اپنے مسئلے ہیں اسی طرح عصری تعلیم یافتہ حضرات کے اندر بھی یہ غلط رجحان پیدا ہو رہا ہے کہ اصل مسئلے کو حل کرنے کے بجائے ہر چیز کے لئے تفریحاً مولویوں کو ذمہ دار ٹہراتے ہیں۔
رہی بہن روشن کی یہ بات، بغیر تحقیق کے مولویوں نے فتویٰ دے دیا، تو پہلے آپ یہ تحقیق کر لیں کہ فتویٰ سچ مچ دیا گیا ہے یا نہیں۔ جو فتویٰ دیا گیا تھا وہ ایک عمومی فتویٰ تھا وہ فتویٰ عمرانہ کے معاملہ میں خصوصی طور پر قطعاً نہیں دیا گیا تھا۔ یہ تو بھارت کے میڈیا کی مہربانی ہے کہ وہ کچھ کا کچھ ثابت کرے۔
عبدالسلام خلیفہ
kaukab
Moderator

PAKISTAN
Posted - Wednesday, February 01, 2006  -  9:05 AM Reply with quote
السلام علیکم بھائ عبداسلام خلیفہ صاحب-سب سے پہلے میں آپ کو بھائ کی بجاۓ بہن کہنے پرمعذرت چاہتی ہوں-اصل میں بات یہ ہے کہ اللہ کا دین بتانے والے یا کسی معاملے میں اجتہاد کرنے والوں کے کندھوں پر بہت بھاری ذمہ داری ہوتی ہے وہ اپنی ہر بات کے لیے اللہ تعالی کے سامنے جواب دہ ہیں -روشن بہن کی یہ بات کہ ہر معاملے کی پہلے تحقیق کرنی چاہیے بالکل درست ہے -بلکہ قرآن مجید نےتمام لوگوں کو حکم دیا ہے کہ محض سنی سنائ باتوں پر یقین نہ کرو اور نہ ہی اسے آکے پھیلاؤجب تک تحقیق نہ کرلوکیونکہاس سے بہت سی پیچیدگیاں پیدا ہوجاتی ہیں-اس لحاظ سے ہم سب لوگوں کو تربیت کی ضرورت ہے-
raushan

UNITED ARAB EMIRATES
Posted - Wednesday, February 01, 2006  -  9:17 AM Reply with quote
Text of the Question and fatwa on Imrana

Scanned copy of fatwa

Question:
In Charthawal town of Muzaffarnagar district, a married woman was raped by her real father-in-law. When this incident was made public by this woman, the village panchayat decided that under such condition the woman has got divorced and now this the woman, who was the wife of rapist’s son, has now become the wife of the father-in-law; that she has become forbidden (haram) for her husband. The village panchayat has sent the woman to her parents’ house (maika). This woman has five children from her husband.

Now the question arises: if a married woman is raped by her real father-in-law, will her wifehood be changed, i.e., will she no longer remain the wife of her husband or will she be considered as divorced and will she become haram for her husband? If it is so, will she be married anew to her rapist father-in-law? And whose children will those five existing children be considered? Will these children be considered brothers and sisters of their father?

Such types of questions are making rounds and are being discussed in that area. In the absence of any clear Shar’i command or explanation, a great sense of uncertainly is prevailing in the locality. There are also a lot of misunderstandings and misreportings in the media. Ulama and Muftis are therefore requested to give their opinions and clarifications in this matter.

Mohammad Ashraf Usmani
Rashtriya Sahara (Urdu)



Bismillahir Rahmanir Raheem
The answer with the help of Allah
If someone has committed adultery with the wife of his son, and if this has been proved by the depositions of witnesses or if his son confirms it or if the woman herself admits and confirms it, the wife of the son becomes haram forever for the son. If the father copulates with a woman either legally after marriage, or illegally without marriage, in both cases it becomes haram for a man [son] to keep her her in his marriage.

If is mentioned in the Qur’an ‘wa la tankihoo ma nakaha aaba-o-kum’ [“And marry not women whom your fathers married” -- Qur’an, 4:22], i.e., the son should separate himself from his wife and never go to her. The contention of the panchayat people that the wife of the son has now become wife of the father and her wifehood has changed is not correct, or to say that the wife of the son is divorced is also not correct. Neither she can be married to her father-in-law. All the five children are legitimate children of their real parents. They will be considered grandsons and granddaughters of their father’s father and not brothers and sisters of their father. The people of the village, because of their ignorance, have wrongly interpreted Quranic injunctions and have given a wrong judgment. It is probably because of wrong interpretation and judgement that various types of controversial questions are being raised which are disturbing people’s minds.

Habibur Rahman, Mufti, Darul Uloom, Deoband
The answer is correct: [Muftis] Kafilur Rahman and Muhammad Zafiruddin

[Translation ends]
raushan

UNITED ARAB EMIRATES
Posted - Wednesday, February 01, 2006  -  9:26 AM Reply with quote
assalam alaikum,sabse pahle arz kar doon ke main aapka deeni bhai hoon bahan nahin..
mujhe yeh arz karna tha ke agar woh fatwa amoomi tha to kya iske ye mani hain ke aise mamlat ke liye bhi fatwe liye jaa sakte hain jinka sire se koi wajood he na ho..yani ek khayali masle pe koi bhi apni zehan ke ikhtera se ek sawal morattab kare aur uska jawab qazi se le le..sahaba ke daur m ein aisi koi misal agar ho to batayein ke kisi ne khyali masayel pe fatwa liya ya diya ho..logon ne to is bat pe bhi fatwe diye ke agar koi kahe ke uski riyah kharij hojaye to uski biwi ko talaq aur agar waqai aisa ho gaya to uski talaq ho jayegi..mera kahna sirf ye tha ke sawal poochhne wala kitna sanjeeda hai isko dekhna bhi utna he zaroori hai jitna ke masle ka jawab talash karna..
http://www.milligazette.com/dailyupdate/2005/20050706b.htm#copy_fatwa
raushan

UNITED ARAB EMIRATES
Posted - Wednesday, February 01, 2006  -  9:33 AM Reply with quote
rah gayi baat media ko dosh dene ki to yeh arz kar doon ke unse ziyada qasoor apna hai ke hum unhein aisa mauqa he kyun dete hain.shukr is baat ka hai ke deoband ne bahot jald isse sabaq seekh liya aur unhone is qism ke fatwe dene ke liye ek alag se committee bana di..

Hum ajeebo gharib qaum hain..jinke her masle ka jawab yahood o nasara ki sazishein hain ..hum aisi batein kar ke khud ko tasalli dete hain aur itminan kar baithte hain ke hamara to kahin se bhi koi qasoor nahin ..agar yeh baat sabit shuda hai ke media hamara dushman hai to is ke muqable mein hamne kya taiyari ki hai.uske jawab ke liye hamne kya kuchh kiya hua hai ya sirf doosron ka qasoor ginwa ke apni duniya mein mast ho gaye hain
kaukab
Moderator

PAKISTAN
Posted - Friday, February 03, 2006  -  6:48 PM Reply with quote
السّلام علیکم؛روشن صاحب میں اپنی مصروفیات کی وجہ سے جلد جواب نہ لکھ سکی؛معذرت چاہتی ہوں-اس واقعہ کے بارے میں پڑھ کر بہت افسوس ہوا اور اس سے بڑھ کر افسوس کی بات یہ ہے کہ ہم اپنے مساءل کے حل کے لیے قرآن مجید سے رجوع کرنے کی بجاۓ فقہ کی کتابوں کی طرف رجوع کرتے ہیں-قرآن مجید میں سورہ النور کے اندرRapistكي سزا سو کوڑے ہیں اور عادی مجرم کی سزا موت اور سزا دینے کے لیے ہدایت کی گئ ہے کہ وہ لوگوں کی موجودگی میں دی جاۓ تاکہ لوگ عبرت حاصل کریں-قرآن مجید کی جس آیت کا حوالہ دے کر فیصلہ دیاگیا ہے وہ تو درحقیقت اس پس منظر میں ہے کہ باپ کی وفات کے بعد بیٹے اپنی باپ کی منکوحہ سے شادی کرلیتے جو کہ شرم وحیا کے منافی ہے اس طرح سسر کے لیے بہو کو بمنزلہ بیٹی رکھا گیا اور بیٹے کی وفات یا بیوی کو طلاق دینے کے بعد بھی سسر بہو سے شادی نہیں کرسکتا-اسلام اپنے احکامات میں بالکل واضح ؛فطری اور اخلاقی مذھب ہے -اللہ تعالی ہمیں اسے سمجھنے کی توفیق دے اور اس کے احکامات میں پیچدگیاں پیدا کرنےسےبچاۓ-اس طرح کے فیصلے دینے سے مجرم کی حوصلہ افزائ ہوتی ہے-روشن صاحب اسی فورم پر میں نے اردو لکھنے کا طریقہ بتایا ہے اسے پڑھ لیجیے یا پھر انگریزی ہی میں لکھ لیا کریں-

Reply to Topic    Printer Friendly
Jump To:

Page 1 of 1


Share |


Copyright Studying-Islam © 2003-7  | Privacy Policy  | Code of Conduct  | An Affiliate of Al-Mawrid Institute of Islamic Sciences ®
Top    





eXTReMe Tracker