Powered by UITechs
Get password? Username Password
 
 
Page 1 of 1

  Reply to Topic    Printer Friendly 

AuthorTopic
Siddiq Bukhary
Moderator

PAKISTAN
Topic initiated on Wednesday, March 17, 2004  -  12:08 PM Reply with quote
تعلیمی نظام اور کردار سازی


کیا اس ویب کے فاضل شرکاء اس سلسلہ میں رہنمائی کر سکتے ہیں کہ کسی بھی تعلیمی نظام میں وہ کو ن سی چیز ہوتی ہے جو طلبا کی کردار سازی میں اہم کردار ادا کرتی ہے؟
hkhan

UNITED KINGDOM
Posted - Sunday, March 21, 2004  -  8:42 PM Reply with quote
assalamoalaykum bhai sahib
mujhay aap key khaalie urdu forums dekh ker bohat afsos hota hey keh aap nay itna waqt aur mehnat sarf key hay
magar umeed hay hamaray behan bhai in say faida zaroor uthain gay
(phool phainkay hay auron ki taraf balkay samar bhi
ay khana baranda'ze samar, kuch tu idhar bhi!!!)

aap apni koshish jaari rakhain
aap ka ajar zaiya naheen ho ga' insha'Allah
wassalaam
koshish main masroof
aap ki marketing asst(kuch ka'myab, kuch naakaam)

.
Siddiq Bukhary
Moderator

PAKISTAN
Posted - Monday, March 22, 2004  -  11:04 AM Reply with quote
وعلیکم السلام بہن جی
یہ جان کر خوشی ہوئی کہ کوئی تو ہے جو ہمارے فورمز پہ آنے کی زحمت کر تاہے اگر آپ بھی نہ کریں تو ہم کیا کر سکتے ہیں- اس لئے یقینا آپ شکریہ کی مستحق ہیں- کسی بھی نیک کام میں اصل اہمیت کوشش او ر سعی کی ہے نہ کہ نتیجہ کی - اگر چہ انسانی طبائع نتیجہ سے زیادہ متاثر ہوتی ہیں لیکن مجھے یوں محسوس ہوتا ہے کہ اللہ کے ہاں پرسش کوشش کی ہو گی نہ کہ مطلوب نتائج کی -اور یہ اللہ بہر حا ل جانتا ہے کہ کس کی کوشش میں کتنا اخلاص تھا- یہی وہ عنصر ہے کہ جو اس گرہ کو کھولتا ہے کہ قیامت میں نیکیاں گنی نہیں جائیں گی بلکہ ان کا وزن کیا جائے گا اور وزن میں ظاہر ہے کہ اخلاص ہی اصل اہمیت کا حامل ہے - وہ جو ازہر درانی نے کہا ہے کہ
ہر حال میں آواز لگاتے رہو ازہر
صحر ا میں اذانوں کا تسلسل نہیں ٹوٹے
اور یہ کہ
شہر غفلت میں اذان فجر ہے کار ثواب
تمہیں اس عمل کی لذتوں کا اندازہ نہیں

اس لئے ہمیں تو بہر حال آواز لگانی ہے

اللہ کریم آپ کو بھی اجر عظیم عطا فرمائے آپ یقینا دیا ر غیر میں جو کوشش اور جہد کر رہی ہیں وہ یقینا ہماری ادنی کاوشوں سے کہیں آگے ہے-
student

PAKISTAN
Posted - Thursday, April 08, 2004  -  5:41 AM Reply with quote
کسی بھی تعلیمی نظام میں ا ستاد ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے اسی طرح طلبا کی کردار سازی میں بھی استاد ہی اصل اہمیت کا حامل ہے اس کا عملی نمونہ ہی طلبا کے کردار کے بنائو اور بگاڑ میں بنیاد کی حیثیت رکھتا ہے-
hkhan

UNITED KINGDOM
Posted - Friday, April 23, 2004  -  11:04 AM Reply with quote
assalamoalaykum
aap ney saheeh farmaya
iss key ilawa bhi aham factors hein
jo ustaad key namoonay ko oppose kar saktay hein aur ustaad ki koshish kamzor ho sakti hey ; jesay taleem gah ka mahol waghairah, wahan kiya media circulate karta hey etc.;
kiya khayal hey?
student

PAKISTAN
Posted - Saturday, April 24, 2004  -  11:43 AM Reply with quote
میڈیا اور دیگر عناصر کی اہمیت اپنی جگہ لیکن میرے خیال میں استاد کی اہمیت پھر بھی اسی آب و تاب سے برقرار رہتی ہے - اگر استاد اپنے شعبے اور طلبا سے مخلص ہواور وہ اس کو ایک عبادت سمجھ کر انجام دے رہا ہوتو کوئی وجہ نہیں کہ وہ دیگر عناصر کے نا مطلوب اثرات کو زائل نہ کر سکے سو فیصد تو شاید ممکن نہ ہو لیکن کافی حد تک یہ اثرات اپنی اہمیت کھو دیں گے- انسان پیکر محسو س کا خوگر ہے اور استاد کی صورت میں طلبا کو ایک پیکر محسوس مل جاتا ہے - اس کا کردار طلبا کو پیروی پہ مجبو ر کر دے گا- میڈیا سے انٹرنیٹ سے ٹی وی سے نماز کی اہمیت پہ لاکھ لیکچر دے ڈالئے ان کے اثرات اس قدر گہرے نہیں ہو سکتے جتنے کہ اس بات کے کہ اگر اذان ہوتے ہی استاد طلبا کے سامنے عملی طور پر نماز کے لئے چل پڑے- یہ عمل طلبا پہ ایک غیر محسوس انداز میں اثرات مرتب کرے گا- اور ویسے بھی چند گر ام کا عمل کئی کلو کی باتوں پہ بھار ی ہوتا ہے-
hkhan

UNITED KINGDOM
Posted - Monday, April 26, 2004  -  4:18 PM Reply with quote
as'alaykum
aap nay drust farmaya
lekin ham ney to apnay bachon mein bhi dekha hey keh ustad sey bhi ziyada jo kuch doston sey milta hey, seriously letay hein
friends ko ziyada trust kartay hein.

haan yeh ho sakta hey keh kuch arsay baad practical life mein aa kar ustaad yaa waldein ka namoona yaad aai aur uss ko follow karein?
student

PAKISTAN
Posted - Tuesday, April 27, 2004  -  10:53 AM Reply with quote
مجھے آپ کی بات سے اصولی اختلاف نہیں ہے - استاد کے علاوہ اور بہت سے عوامل بھی یقینا بچے پر اثر انداز ہوتے ہیں لیکن میرا کہنا یہ ہے کہ ان کی حیثیت ثانوی عوامل کی ہے اور استاد کی اہمیت بنیادی - استاد کی اس اہمیت پر مجھے آپ کو ایک کہانی سنانی ہے -
پنجاب ( پاکستان) کے سابق انسپکٹر جنرل پولیس سردار محمد کا تعلق پنجاب کے ایک چھوٹے شہر ٹوبہ ٹیک سنگھ سے ہے ان سے ایک دفعہ ایک انٹرویو میں سوال کیا گیا کہ آپ زندگی میں سب سے زیاد ہ متاثر کس سے ہوئے یا ہیں- انہوں نے فورا کہا کہ اپنے ہائی سکول کے استاد سے اور اس کانام غالبا انہوں نے عبدالقادر بتایا تھا- سردار صاحب نے کہا کہ میں اپنی زندگی میں بہت سی نامور عالمی شخصیات سے ملا ہوں بلکہ ان کے قریب رہا ہوں لیکن آج تک کسی سے اس قدر متاثر نہیں ہوا جتنا کہ عبدالقادر صاحب سے - انہوں نے کہا کہ وہ ہمیں انگریزی زبان پڑھایا کرتے تھے - اور سکول کے بعد گھر پر بھی بغیر کسی فیس کے پڑھایا کرتے تھے اور اس میں وہ کسی چھٹی کے قائل نہ تھے حتی کہ عید وغیر ہ پر بھی کوئی چھٹی نہ ہوتی تھی- اس امر سے سارے طلبا بہت تنگ تھے اور وہ اسی آس میں رہتے تھے کہ کسی طرح کوئی چھٹی مل جائے-ایک دن ایسا آیا کہ ان کی بیٹی کا انتقال ہو گیا سارے طلبا نے سکھ کا سانس لیا کہ چلو آج تو چھٹی ہو گی - طلبا جنازے پر ساتھ گئے تو جنازے کے بعد انہوں نے اعلان کیا کہ میر ے سارے طلبا شام کو پڑھنے ضرور آئیں-سب طلبا کی امید وں پراوس پڑ گئی - سردار صاحب کہتے ہیں کہ ہم لوگ شام کو ان کے گھر پہنچے تو لوگ تعزیت کے لئے ان کے پاس آ رہے تھے ان کے ایک دوست نے کہا کہ عبدالقادر کم از کم آج تو تواپنے شاگر دوں کو چھٹی کر دیتا- تو ماسڑ عبدالقادر نے کہا کہ دوست میں ان کو پڑھاتا نہیں بلکہ عبادت کرتا ہوں میں پڑھانے کے عمل کو عبادت سمجھتا ہوں اور آج کی اس عبادت کا ثواب میں اپنی مرحوم بیٹی کو بخش دوں گا-
اس جذبے کے حامل اساتذہ پیدا کرنے کیلئے اصل میں طلبا سے زیادہ ٹیچرز ٹریننگ کے ادارے قائم کرنے کی ضرورت ہے-
(ایصال ثواب کی فنی بحث میں الجھ کر کہانی کی اصل روح نہ ضائع کر دیجیے گا ویسے آپ سے ایسی امید تو نہیں)
hkhan

UNITED KINGDOM
Posted - Tuesday, April 27, 2004  -  6:30 PM Reply with quote
assalamoalaykum
bohat acchi kahani/haqeeqat sunai aap ney.
mein nay bhi aaj he aik relevant to topic kahani suni hay;
abhi hospital sey aatay huay raastay mein aik cassette per;
aap bhisuneay pls!
aik naik buzurg nay lailatul qadr paa lee(pta nahee unhay kaysay pataa chalaa keh wahee l.qadr thee; magar iss mey mat uljhiay gaa/aap sey yeh umeed naheen waysay).
however, kisee nay poocha
tu aap ney iss raat mein kiya maanga
unhon ney farmaya
keh ye dua maangi keh mujhay behtreen momin dost/saathi ataa ker.
log heran reh gaey keh bas, sirf yeh maanga,
magar samajhnay walay samajh gayey keh acchi company he tamam khazanon kee taraf ley jaati hey;
tu mein nay shukr kiya keh chalayn kam az lam website par bhi tu aap jesay acchay logon kee company mill sakti hay.
iss leay mera khayaal hey studying islam key sab members ko iss oer regularly visit, study aur baat cheet karni chaheeay aur jehen jehan acchay dost milein; un sey bhi!
tu mera khayal hey baat phir mahol kee importance per aati hey.
yaa keh naheen?
ibrahim
Moderator

PAKISTAN
Posted - Wednesday, April 28, 2004  -  12:09 PM Reply with quote
ماشاءاللہ ، دونوں کہانیاں بہت سبق آموز ہیں۔
زیر بحث موضوع پر خاکسار کی راۓ بھی یہی ہے کہ اصل اہمیت " استاد " ہی کی ہے۔ یہ علیحدہ بات ہے کہ مغربی انداز تعلیم میں استاد کی حیثیت ثانوی ہے ۔۔۔ اور افسوس یہ ہے کہ ہمارے ہاں بھی اب یہی انداز تعلیم رواج پا رہا ہے ۔۔۔ مگر اس سے انکار ممکن نہیں ہے کہ کردار سازی کے لیے کوئی " رول ماڈل" لازمی ہے اور ہمارے ہاں یہ حیثیت تاحال استاد ہی کو حاصل ہے۔
hkhan

UNITED KINGDOM
Posted - Thursday, April 29, 2004  -  8:45 AM Reply with quote
as,alaykum

mujhay iss sey bilkul ittefaaq hey. lekin mera khayal hey keh iss per bhi munhasir hey keh sha'gird ustaad key saath kitna waqt guzaartay hein aur deegar/ghar walon key satth kitna.
pehlay waqton mein tu ustaad key ghar bhi ana jaana hota thaa. shagird uss ki personal zindagi sey bohat kuch seekhtey thay.uss key kaam kernay ko apni khush qismati samajhtey thay aur ustaad jiss shaagird mein salahiat dekhtay, usay khud qareeb aanay aur seekhnay kaa mauqa daitay.

aaj kal chand deeni halqon key siwa'ustaad apnay ghar bulaaney ko mayoob samajhtey hein.shaagird bhi nateejatan bother naheen kartay.

aap ka kiya khayal hey. kiya iss sey ustaad ka ahtram kam hota hey agar shaagird unhein visit karein?
aur kiya phir bhi aap samajhtay hein ustaad itnay kam taalluq key bawajood role model ban saktay hein, jabkeh sirf class mein mulaqaat ho?
ba'qi"chal so chal"?
hkhan

UNITED KINGDOM
Posted - Thursday, April 29, 2004  -  8:49 AM Reply with quote
e.g. Mohammad sws behtreen ustaad (Muallim)thay. unn kaa apney shaagirdon sey kitna qareebi taalluq tha' aur seekhnay sikhanay ki kaisee fizaa thee
ibrahim
Moderator

PAKISTAN
Posted - Thursday, April 29, 2004  -  10:05 AM Reply with quote
آپ کی بات کافی حد تک درست ہے۔ لیکن اگر آپ بچوں کا ٹائم ٹیبل دیکھیں تو وہ نیند ، سکولن‍گ اور گھر تین حصوں میں تقریبا برابر برابر بٹا ہوا ہے۔ وہ اپنا بہترین وقت اساتذہ ہی کے پاس گزارتے ہیں اور ہر ہر استاد کو وہ اپنے کسی نہ کسی عمل میں " ماڈل" بناتے ہیں۔
گھر اور والدین کا اپنا ایک کردار ہے۔ یہاں جیسا ماحول بچوں کو ملتا ہے ان کی شخصیت بھی اسی کے مطابق پروان چڑھتی ہے۔
بحیثیت ایک استاد مجھے اس میں کوئی قباحت نظر نہیں آتی کہ طلبہ استاد کے گھر آئیں یا وہ ان کے گھر جاۓ۔ بلکہ میں اسے ضروری اور مفید سمجھتا ہوں۔
جہاں تک بڑوں کا تعلق ہے تو ان کی ضرورت " اچھی صحبت" پوری کر سکتی ہے اور وہ کسی کی بھی ہو سکتی ہے لہذا ہمیں بھی ، کم از کم ہفتے میں ایک بار ، کسی بابرکت مجلس یا صالح شخصیت سے مستفید ہونا چاہیے۔

Reply to Topic    Printer Friendly
Jump To:

Page 1 of 1


Share |


Copyright Studying-Islam © 2003-7  | Privacy Policy  | Code of Conduct  | An Affiliate of Al-Mawrid Institute of Islamic Sciences ®
Top    





eXTReMe Tracker