Powered by UITechs
Get password? Username Password
 
 ہوم > سوالات > معاشی مسائل
مینو << واپس قرطاس موضوعات نئے سوالات سب سے زیادہ پڑھے جانے والے سوال پوچھیے  

غیر مسلموں سے سود لینا
سوال پوچھنے والے کا نام Ali Raza
تاریخ:  31 جنوری 2005  - ہٹس: 3606


سوال:
میں نے سنا ہے کہ غیر مسلم ملک میں بنک انٹرسٹ لیا جا سکتا ہے اور اس کو کسی حدیث کے حوالے سے بیان کیا جاتا ہے کیا ایسا ہی ہے؟

جواب:
سود لینا بہرحال ممنوع ہے مسلم ملک ہو یا غیر مسلم ملک - اس کی ممانعت کی علت مسلم یا غیر مسلم ہونا نہیں ہے بلکہ اس کے اند ر موجود اخلاقی قباحت ہے- جس طرح آپ مسلم ملک میں ہوں یا غیر مسلم ملک میں آپ کو بہر حال دیانتدار ہونا چاہیے - اسی طرح سود سے پرہیز بھی لازم ہے چاہے آپ جہاں بھی ہوں- جس حدیث کا آپ نے حوالہ دیا ہے وہ یہ ہے- ’’ حربی کافر اور مسلمان کے درمیان کوئی سود نہیں ہے ‘‘ (بیہقی) یہ حدیث صحاح ستہ میں کہیں نہیں پائی جاتی اور ویسے بھی یہ مستند نہیں ھے - دوسرے یہ قرآن سے بھی متصادم ہے اس لیے اسے قبول نہیں کیا جا سکتا-

(شہزاد سلیم)
ترجمہ: صديق بخاري


Counter Question Comment
You can post a counter question on the question above.
You may fill up the form below in English and it will be translated and answered in Urdu.
Title
Detail
Name
Email


Note: Your counter question must be related to the above question/answer.
Do not user this facility to post questions that are irrelevant or unrelated to the content matter of the above question/answer.
Share |


Copyright Studying-Islam © 2003-7  | Privacy Policy  | Code of Conduct  | An Affiliate of Al-Mawrid Institute of Islamic Sciences ®
Top    





eXTReMe Tracker